عرب ملک میں مسلمان آدمیوں کو بڑی پیشکش کر دی گئی

متحدہ عرب امارات میں مسلمان آدمیوں کو حکومت کی جانب سے بڑی پیشکش کی گئی ہے. رپورٹ کے مطابق متحدہ امارات میں غیر شادی شدہ عورتوں کی تعداد میں کافی حد تک اضافہ ہوا ہے اور یہ فیصلہ حکومت نے غیر شادی شدہ لڑکیوں کی تعداد کم کرنے کے لیے کیا ہے. حکومت نے اس مسلے سے نجات پانے کے لیے عربی لڑکوں میں کیا پیشکش کی ہے؟ تفصیل پڑھیں.

 

متحدہ عرب امارات کی وزارت انفراسٹرکچر نے امارات میں غیر شادی شدہ خواتین کی پریشانی حل کرنے کے لیے اماراتی مردوں کو شاندار پیشکش کر دی ہے ۔ تفصیلات کے مطابق وزیر انفرسٹرکچر ڈاکٹر عبداللہ نے فیڈرل کونسل کے اجلاس میں اعلان کیاہے کہ جو اماراتی شہری دو شادیاں کریگا اس کو ہاؤس الاؤنس ملے گا۔ ان کا مزید کہنا تھا کہ دوسری بیوی کے لیے وہی سہولیات فراہم کی جائیں گی جو پہلی بیوی کے لیے دی جاتی ہیں ۔

 

فیڈرل کونسل کے ایک اور رکن کا کہناتھا کہ یہ اچھا فیصلہ ہے اس سے امارات میں غیر شادی شدہ خواتین کی تعداد میں کمی آئے گی ۔ ایسی خواتین کی عمر تیس سال سے زائد ہوجائے تو شادی ہونا مشکل ہو جاتی ہے ۔

 

فیڈرل کونسل میں یہ تجویز بھی دی گئی کہ دوسری شادی کرنے والی خاتون کو پہلی بیوی کے ساتھ ملحقہ گھر دیا جائے لیکن اس تجویز کو مسترد کردیا گیا کہ اس سے دوسری شادی کرنے والی خاتون کا حق مارا جائے گا۔ اماراتی شہری کی دوسری بیوی کو بھی وہی سہولیات ملیں گی جو پہلی بیوی کو ملتی ہیں ۔

Comments are closed.

Open

%d bloggers like this: